مسجد اقصیٰ پر اسرائیلی حملہ بزدلانہ اور مذموم حرکت ہے: امیر جماعت اسلامی ہند

جماعت اسلامی ہند کے امیرسید سعادت اللہ حسینی نے اسرائیلی پولیس کے ذریعہ مسجد اقصیٰ پر حملے کی سخت مذمت کی اور کہاکہ اسرائیل پولیس کا یہ بزدلانہ عمل اشتعال پھیلانے والا ہے، لہٰذا عالمی برادری کو چاہئے کہ وہ اس سلسلے میں جتنی جلد ممکن ہو نوٹس لے اور ضروری کارروائی کرے۔میڈیا کو جاری اپنے ایک بیان میں امیر جماعت نے کہا کہ ہم مسلمانوں کے قبلہ اول مسجداقصیٰ پرحملے کی سخت مذمت کرتے ہیں اور حملہ آور کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کرتے ہیں۔ ایک رپورٹ کے مطابق اسرائیلی پولیس کی گولی باری اور تشدد میں 178 نمازیوں کو چوٹیں آئی ہیں جبکہ 88 افراد شدید زخمی ہوئے ہیں۔ انہیں مسجد الاقصی کے احاطے اور یروشلم کے مختلف اسپتالوں میں بھرتی کرایا گیا ہے۔ اسرائیل کا یہ رویہ نہایت ہی قابل نفرت و مذمت ہے۔کیونکہماہ رمضان کے آخری دنوں میں جب مسلمان اپنا زیادہ سے زیادہ وقت عبادت و ریاضت میں گزارتے ہیں، اس حادثے کو انجام دیا گیا ہے تاکہ مسلمانوں کے مذہبی جذبات کونقصان پہنچایا جاسکے۔دنیا بھر کے مسلمان مسجد اقصی کے لئے اپنے دلوں میں نہایت ہی عقیدت اور احترام رکھتے ہیں۔ لہٰذا ہمارا مطالبہ ہے کہ عالمی برادری اور اقوام متحدہ فوری طور پر اس حادثے کا نوٹس لے اور اسرائیلی حکومت کو اس طرح کے مذموم کردار سے باز رہنے اور سرکاری طور پر معافی نامہ جاری کرنے کا پابند بنائے۔ ہم ہندوستان کی حکومت سے بھی اپیل کرتے ہیں کہ وہ اس حادثے کی مذمت کرے اور اسرائیلی سفیر کو بلاکر اس سلسلے میں بیان جاری کرے۔

وطن سماچار ڈیسک
فائل فوٹو

مسجد اقصیٰ پر اسرائیلی حملہ بزدلانہ اور مذموم حرکت ہے: امیر جماعت اسلامی ہند

 

نئی دہلی،8 مئی: جماعت اسلامی ہند کے امیرسید سعادت اللہ حسینی نے اسرائیلی پولیس کے ذریعہ مسجد اقصیٰ پر حملے کی سخت مذمت کی اور کہاکہ اسرائیل پولیس کا یہ بزدلانہ عمل  اشتعال پھیلانے والا ہے، لہٰذا عالمی برادری کو چاہئے کہ وہ  اس سلسلے میں جتنی جلد ممکن ہو نوٹس لے اور ضروری کارروائی کرے۔میڈیا کو جاری اپنے ایک بیان میں امیر جماعت نے کہا کہ ہم مسلمانوں کے قبلہ اول مسجداقصیٰ پرحملے کی سخت مذمت کرتے ہیں اور حملہ آور کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کرتے ہیں۔ ایک رپورٹ کے مطابق اسرائیلی پولیس کی گولی باری اور تشدد میں 178 نمازیوں کو چوٹیں آئی ہیں جبکہ 88  افراد شدید زخمی ہوئے ہیں۔ انہیں مسجد الاقصی کے  احاطے اور یروشلم کے مختلف اسپتالوں میں بھرتی کرایا گیا ہے۔  اسرائیل کا یہ رویہ نہایت ہی قابل نفرت و مذمت  ہے۔کیونکہماہ رمضان کے آخری دنوں میں جب مسلمان اپنا زیادہ سے زیادہ وقت عبادت و ریاضت میں گزارتے ہیں، اس حادثے کو انجام دیا گیا ہے تاکہ مسلمانوں کے مذہبی جذبات کونقصان پہنچایا جاسکے۔دنیا بھر کے مسلمان مسجد اقصی کے لئے اپنے دلوں میں  نہایت ہی عقیدت اور احترام رکھتے ہیں۔  لہٰذا ہمارا مطالبہ ہے کہ عالمی برادری  اور اقوام متحدہ فوری طور پر اس حادثے کا نوٹس لے اور اسرائیلی حکومت کو اس طرح کے مذموم کردار سے باز رہنے اور سرکاری طور پر معافی نامہ جاری کرنے کا پابند بنائے۔ ہم ہندوستان کی حکومت سے بھی اپیل کرتے ہیں کہ وہ اس حادثے کی مذمت کرے  اور اسرائیلی سفیر کو بلاکر اس سلسلے میں بیان جاری کرے۔

You May Also Like

Notify me when new comments are added.