خواجہ کے گنہگار پر آخر کیا بولا سپریم کورٹ؟ پڑھئے پوری خبر

سپریم کورٹ آف انڈیا نے ٹی وی اینکر امیش دیوگن اور ویب جرنلسٹ نوپور شرما کے خلاف تحقیقات پر روک لگا دی ہیں، ساتھ ہی پولس کو ہدایت دی ہے کہ وہ کوئی سخت کاروائی ان کے سلسلہ میں اگلی سماعت تک نہ کرے واضح رہے کہ امیشن دیوگن نے پندرہ جون کو اپنے ایک شو کے دوران خواجہ معین الدین چشتی اجمیری کو لٹیرا اور حملہ آور کہاتھا،جس کے بعد پوری دنیا بھر سے رد عمل دیکھنے کو مل رہا تھااور لوگوں میں اس بات کو لے کر کے کافی غصہ تھا۔ جس کے بعد ملک کی کئی ریاستوں میں آئی پی سی کی دفعہ 295اے، 153اے،505اور 34کے تحت مقدمہ درج کیاگیا تھااور لوگوں کی مانگ تھی کہ امیش دیوگن کو فوری طور سے گرفتار کیا جائے اور اسے سلاخوں کے پیچھے دھکیلا جائے۔ ایک کے بعد ایک مقدموں سے پریشان امیش دیوگن نے اپنے وکیل وویک جین کے ذریعہ عدالت سے فریاد کی تھی کہ اس کی ایک نادانستہ غلطی جس کی اس نے ٹوئیٹ کرکے پہلے ہی معافی مانگ لی ہے اور وضاحت کردی ہے اس کے بعد اس کے خلاف ایف آئی آر کو ختم کیا جائے۔

وطن سماچار ڈیسک

خواجہ کے گنہگار پر آخر کیا بولا سپریم کورٹ؟ پڑھئے پوری خبر

نئی دہلی:سپریم کورٹ آف انڈیا نے ٹی وی اینکر امیش دیوگن اور ویب جرنلسٹ نوپور شرما کے خلاف تحقیقات پر روک لگا دی ہیں، ساتھ ہی پولس کو ہدایت دی ہے کہ وہ کوئی سخت کاروائی ان کے سلسلہ میں اگلی سماعت تک نہ کرے واضح رہے کہ امیشن دیوگن نے پندرہ جون کو اپنے ایک شو کے دوران خواجہ معین الدین چشتی اجمیری کو لٹیرا اور حملہ آور کہاتھا،جس کے بعد پوری دنیا بھر سے رد عمل دیکھنے کو مل رہا تھااور لوگوں میں اس بات کو لے کر کے کافی غصہ تھا۔ جس کے بعد ملک کی کئی ریاستوں میں آئی پی سی کی دفعہ 295اے، 153اے،505اور 34کے تحت مقدمہ درج کیاگیا تھااور لوگوں کی مانگ تھی کہ امیش دیوگن کو فوری طور سے گرفتار کیا جائے اور اسے سلاخوں کے پیچھے دھکیلا جائے۔ ایک کے بعد ایک مقدموں سے پریشان امیش دیوگن نے اپنے وکیل وویک جین کے ذریعہ عدالت سے فریاد کی تھی کہ اس کی ایک نادانستہ غلطی جس کی اس نے ٹوئیٹ کرکے پہلے ہی معافی مانگ لی ہے اور وضاحت کردی ہے اس کے بعد اس کے خلاف ایف آئی آر کو ختم کیا جائے۔

 عدالت نے ایف آئی آر کو ختم تو نہیں کیا لیکن امیش دیوگن کو بڑی راحت ضرور دے دی ہے جس کے بعد مانا یہ جارہا ہے کہ اب اس کی گرفتاری اگلی سماعت تک نہیں ہونے والی ہے۔اہم بات یہ ہے کہ عدالت عظمیٰ کا روک لگانے کا حکم یہ اس وقت آیا ہے جب عدالت نے ابھی حال ہی میں سینئر صحافی اور پدم شری ایوارڈیافتہ ونود دوا کے خلاف فروری میں دہلی فسادات پر ان کے ٹیلی کاسٹ کیلئے سڈیشن کے الزام میں تحقیقات پر روک لگانے سے انکار کر دیا تھا۔امیش دیوگن کیلئے سینئر ایڈوکیٹ سدھارتھ لوتھرا نے عدالت سے کہا کہ ان کے مؤکل نے پہلے ہی ٹویٹ کر کے وضاحت پیش کردی ہے۔ مسٹر لوتھرا نے کہا کہ نادانستہ غلطیوں کو مجرمانہ جرائم قرار نہیں دیا جاسکتا۔

واضح رہے کہ سپریم کورٹ نے صوفی بزرگ خواجہ معین الدین چستی اجمیری معین الہند کے خلاف ٹی وی نیوز اینکر امیش دیوگن کے تبصرے کے بعد ان کے خلاف متعدد ریاستوں میں درج متعدد ایف آئی آر کی تحقیقات پر آج(جمعہ) روک لگا دی ہے۔جسٹس اے ایم خان ولکر اور جسٹس دنیش مہیشوری کی تعطیلاتی بینچ نے پولیس کو دیوگن کے خلاف کوئی سخت اقدام اٹھانے سے روک دیا۔ ان کے خلاف راجستھان، تلنگانہ اور مہاراشٹر میں ایف آئی آر درج کی گئی ہیں۔

اسی طرح، جسٹس ایس کے کول اور بی آر۔ گوئی کی ایک اور تعطیلاتی بینچ نے مغربی بنگال پولیس کی جانب سے ویب پورٹلاوپنڈیا ڈاٹ کامکی ایڈیٹر نو پور شرما اور تین دیگر افراد کے خلاف میڈیا میں درج کی جانے والی رپورٹس کیلئے درج ایف آئی آر میں کارروائی پر روک لگا دی۔ ایف آئی آر میں جن جرائم کا ذکر کیا گیا ہے ان میں مذاہب، برادریوں وغیرہ میں دشمنی کو فروغ دینا شامل ہے۔ شرما کی طرف سے، سینئر ایڈووکیٹ مہیش جیٹھ ملانی عدالت میں پیش ہوئے اور انہوں نے کہاکہ مغربی بنگال حکومت پر پریس کی آزادی پر ''غیر قانونی سنسرشپ'' لگارہی ہے۔دیوگن کے خلاف ممبئی کے پیڈھونی پولیس اسٹیشن میں ایک اور ایف آئی آر درج ہے جس میں معین الہند صوفی بزرگ اور کروڑوں لوگوں کی عقیدت کا مرکز چستی اجمیری کا ذکر کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ مذہبی جذبات کو ٹھیس پہنچانے کی کوشش ہوئی ہے جس سے لوگ سخت نالاں اور ناراض ہیں۔ اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ کیا کسی بحث کو گرما کرم کرنا اور پھر اس پر ایک نہیں دو نہیں بلکہ تین بار کسی ایک بین الاقوامی شخصیت کو نشانہ بنانااور پھر اس پر معافی کا طلبگار ہو جانا کافی ہے اور کیا یہی صحافت ہے اور بحث کو اگر گرما گرم کرنا ہی صحافت ہے تو پھر سنجیدہ گفتگو کو کیا کہیں گے اس کی تعریف بھی سامنے آنی چاہئے؟اور اس بات پر بھی گفتگو ہونی چاہئے کہ ہم اپنی آنے والی نسلوں کیلئے گفتگو کا کون سا معیار چھوڑ کر جانا چاہتے ہیں۔

 

You May Also Like

Notify me when new comments are added.