تعلیم اور معلومات کی اہمیت وافادیت

بچوں کا مستقبل سنوارنے میں تعلیم اور مختلف افراد کا کردار بہت اہم ہوتا ہے۔ تعلیم کی اہمیت اور افادیت ہرعہد میں مسلمہ رہی ہے۔ اسلام میں علم کی حصولیابی کو لازمی قرار دیا گیا ہے، کیونکہ بغیر علم کے مذہبی اعمال کی اہمیت جاتی رہتی ہے۔ سماج میں اپنا کردار ادا کرنے کیلئے مختلف افراد کو الگ الگ ذمہ داریاں سونپی گئی ہیں ۔ اس ٹیم میں سے کسی بھی فرد کی طرف سے کاہلی، غفلت، بے احتیاطی اور غیر سنجیدگی بچے کو تعلیمی راہ سے غلط راستہ پر ڈال سکتی ہے، جس سے وہ بربادی کی طر ف جاسکتا ہے اور اس کی عادات واطوار خراب ہوسکتے ہیں، جس سے اس کے مستقبل کا ناقابل تلافی نقصان ہوسکتا ہے۔ بچوںکے مستقبل کی رہنمائی کیلئے ٹیم کے جو لوگ اہم کردار ادا کرتے ہیں ان میں والدین اور سرپرست،درس وتدریس سے وابستہ اساتذہ، تعلیمی اداروں کاانتظامیہ، ریاستی سرکاریں اور مرکزی سرکار کی انتظامیہ شامل ہے۔

وطن سماچار ڈیسک

تعلیم اور معلومات کی اہمیت وافادیت

مکرمی 

 

 

 

بچوں کا مستقبل سنوارنے میں تعلیم اور مختلف افراد کا کردار بہت اہم ہوتا ہے۔ تعلیم کی اہمیت اور افادیت ہرعہد میں مسلمہ رہی ہے۔ اسلام میں علم کی حصولیابی کو لازمی قرار دیا گیا ہے، کیونکہ بغیر علم کے مذہبی اعمال کی اہمیت جاتی رہتی ہے۔ سماج میں اپنا کردار ادا کرنے کیلئے مختلف افراد کو الگ الگ ذمہ داریاں سونپی گئی ہیں ۔ اس ٹیم میں سے کسی بھی فرد کی طرف سے کاہلی، غفلت، بے احتیاطی اور غیر سنجیدگی بچے کو تعلیمی راہ سے غلط راستہ پر ڈال سکتی ہے، جس سے وہ بربادی کی طر ف جاسکتا ہے اور اس کی عادات واطوار خراب ہوسکتے ہیں، جس سے اس کے مستقبل کا ناقابل تلافی نقصان ہوسکتا ہے۔ بچوںکے مستقبل کی رہنمائی کیلئے ٹیم کے جو لوگ اہم کردار ادا کرتے ہیں ان میں والدین اور سرپرست،درس وتدریس سے وابستہ اساتذہ، تعلیمی اداروں کاانتظامیہ، ریاستی سرکاریں اور مرکزی سرکار کی انتظامیہ شامل ہے۔

 

 

 

والدین اور سرپرست کا معاملہ یہ ہے کہ بچے کی پیدائش سے ہی ان کا کردار شروع ہوجاتا ہے۔ حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہے کہ بچے کی پیدائش کے بعدان کاخوبصورت نام رکھنا چاہئے، انھیں پاکیزگی اور پرہیزگاری کا  درس دینا چاہئے، ان کیلئے بہترین تعلیم گاہ ( اسکول) کا انتخاب کرنا چاہئے اور سرپرستوں کا بڑا کام یہ بھی ہے کہ گھر میں وہ بچوںکے تمام کاموں پر نگاہ رکھیں۔ بچوں کو مختلف مذاہب اور انسانی اخلاق وعادات سکھایاجانا چاہئے،انھیں اپنے ملک اور تاریخی شخصیات کے متعلق بتایا جانا چاہئے،انھیں اچھے اور بااخلاق دوستوں کی رہنمائی کرنی چاہئے کیونکہ بہترین ساتھی پرفیوم بیچنے والوں کی طرح ہوتے ہیں، اچھے ساتھی کم ازکم اپنی خوشبو بکھیریں گے جبکہ لوہار یعنی غلط ساتھی اپنے ساتھیوں کو سوائے گردوغباراور دھویں کے کچھ نہیں دے سکتے۔بچوں کی زندگی میں اساتذہ کا رول انتہائی اہم ہوتا ہے۔ یہ انتہائی حساس اورپاکیزہ گروپ ہوتا ہے جس کی محنت سے بچے کامستقبل فروغ پاتاہے، حتی کہ معمولی خلفشار اور عدم سنجیدگی بچوں کو نقصان پہنچاسکتی ہے، اساتذہ کو چاہئے کہ وہ بچوں کو کام دینے سے قبل زیادہ سے زیادہ احتیاطی مشق کریں کیونکہ یہی چیز بچوں کی جسمانی عمارت بنانے میں معاون ہوگی۔

 

 

 

بچوں کا مستقبل سنوارنے میں تیسرا اہم ستون تعلیمی اداروں کا انتظامیہ ہوتا ہے۔ انتظامیہ کسی بھی تعلیمی ادارے کیلئے ریڑھ کی ہڈی کی طرح ہوتا ہے۔ کچھ اسکول غیر ضروری چیزوں میں الجھاکر بچوں کے سیکھنے اور پڑھنے کی لگن کم کردیتے ہیں، خصو صاً غیر محتاط طور پر فیس میں اضافہ انتہائی غلط ہوتا ہے۔ تجربہ کار نگراں کی عدم دستیابی بھی تعلیم پر اثر انداز ہوتی ہے۔بچوں کا مستقبل بنانے میں ریاستی سرکاروں اور مرکزکی انتظامی مشینری بھی اہم ہوتی ہے۔کور نا وائرس کے سبب مارچ 2020 میں لاک ڈاؤن کے نفاذ کی وجہ سے بیشتر غیر سرکاری اسکولوں کی بندی سے اساتذہ کی پوزیشن بدترہوگئی،نجی اسکولوںکے اساتذہ کیلئے اہل وعیال کی کفالت دشوار ہوگئی ہے۔جب تمام سیکٹرز کھل چکے ہیں تو سرکاری اسکولوں کو بھی کورونا ہدایات کے ساتھ کھول دینا چاہئے تاکہ بچے اور اساتذہ درس وتدریس اور اسکولی فضا سے لطف اندوز ہوسکیں۔

 

محمد ہاشم

چوڑیوالان، جامع مسجد، دہلی- 6

 

 

وضاحت نامہ:۔یہ مضمون نگار کی اپنی ذاتی رائے ہے۔ مضمون کو من و عن شائع کیا گیا ہے۔ اس میں کسی طرح کا کوئی ردوبدل نہیں کیا گیاہے۔ اس سے وطن سماچار کا کوئی لینا دینا نہیں ہے۔ اس کی سچائی یا کسی بھی طرح کی کسی جانکاری کیلئے وطن سماچار کسی طرح کا جواب دہ نہیں ہے اور نہ ہی وطن سماچاراس کی کسی طرح کی تصدیق کرتا ہے۔


You May Also Like

Notify me when new comments are added.