Hindi Urdu

مذہب

فکر وخیالات

مدیر کی قلم سے

Poll

Should the visiting hours be shifted from the existing 10:00 am - 11:00 am to 3:00 pm - 4:00 pm on all working days?

SUBSCRIBE LATEST NEWS VIA EMAIL

Enter your email address to subscribe and receive notifications of latest News by email.

مدھیہ پردیش سرکار کے ساتھ مرکزی حکومت ناانصافی بند کرے

ریاست کا 32171کروڑ روپیہ ریلیز کرنے کے مطالبہ کو لیکر عارف مسعود کا جنتر منتر پر تاریخی احتجاج، مطالبہ تسلیم نہیں کیاگیا تو گاندھی وادی طریقہ سے لڑائی جاری رکھنے کا عندیہ

محمد احمد

arif_bhopal.jpg

مدھیہ پردیش سرکار کے ساتھ مرکزی حکومت ناانصافی بند کرے

ریاست کا  32171کروڑ روپیہ ریلیز کرنے کے مطالبہ کو لیکر عارف مسعود کا جنتر منتر پر تاریخی احتجاج، مطالبہ تسلیم نہیں کیاگیا تو گاندھی وادی طریقہ سے لڑائی جاری رکھنے کا عند

نئی دہلی،3اکتوبر: بھوپال سے کانگریس پارٹی کے رہنما اور سینئر رکن اسمبلی عارف مسعود نے آج جنتر منتر پر سیکڑوں کانگریس کارکنان کے ساتھ پہونچ کر مرکزی حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ ریاستی سرکار کے ساتھ ناانصافی ختم کرکے کمل ناتھ سرکار کا 32171کروڑ روپیہ جاری کرے۔ اس موقع پر انہوں نے کہاکہ ریاست کے ساتھ مودی سرکار مسلسل ناانصافی کررہی ہے۔وزیراعظم نے سب کا ساتھ سب کا وکاس کے ساتھ سب کا وشواس کا نعرہ دیاتھا لیکن مدھیہ پردیش میں تینوں چیزوں کو بھول گئے۔ انہوں نے کہاکہ ریاست میں پندرہ سال بی جے پی کی سرکار تھی اور مرکز میں دس سال یوپی اے کی سرکار لیکن کبھی بھی مدھیہ پردیش کے ساتھ نا انصافی نہیں ہوئی، لیکن افسوس یہ ہے کہ آج ایک طرف ریاست قدرتی آفات کی زد میں ہے اور دوسری طرف وزیراعظم بھی ریاست کی مددکرنے کے بجائے ریاست کے ساتھ نا  انصافی کررہے ہیں۔ واضح رہے کہ احتجاج کے بعد انہوں نے وزیراعظم کے دفتر کو میمورنڈم سونپ کر حکومت سے مطالبہ کیاکہ مرکز کے ذریعہ ریاستی حکومت کے 32171کروڑ روپیہ کی کٹوتی کو فوراً ریلیز کیا جائے۔

jantar_mantar_arif_masood.jpg

عارف مسعود نے میڈیا سے بات چیت میں کہاکہ مدھیہ پردیش حکومت کے ساتھ مودی سرکار کے سوتیلے رویہ کے خلاف حکومت کو جگانے کی یہ ہماری ایک علامتی کوشش ہے۔ اگر ہمارا مطالبہ تسلیم نہیں کیاگیا تو ہم گاندھی وادی لوگ ہیں اور گاندھی وادی طریقہ سے اپنا احتجاج جاری رکھیں گے۔انہوں نے کہاکہ آج مدھیہ پردیش سیلاب سے کافی متاثر ہے۔ لوگ کافی پریشان ہیں۔ریاست کے وزیراعلیٰ کمل ناتھ پوری قوت اور محنت کے ساتھ متاثرین کے زخموں کو مندمل کرنے کی کوشش کررہے ہیں۔ لوگوں کو راحت دینے کیلئے ہر ممکن طریقہ اختیار کررہے ہیں، لیکن مرکزی سرکار کی جانب سے خاطر خواہ مدد نہیں مل رہی ہے۔ اگر سرکار یہ کہتی ہے کہ ہم نے اس کو پوریے نقصانات سے واقف نہیں کرایا ہے تو ہم سرکار کو یہ بتانا چاہتے ہیں کہ جب رہ رہ کر بارش جاری ہے تو ہم کیسے پورے نقصانات سے سرکار کو واقف کراسکتے ہیں۔ جب سب لٹ جائے گا تب سرکار مدد دے گی؟ پھر اس مدد کا فائدہ کیا ہوگا؟ ہم چاہتے ہیں کہ سرکار اپنی سرد مہری بند کرے اور ہوش کے ناخن لے، کیونکہ جو مدھیہ پردیش درجنوں پارلیمنٹیرین دینا جانتا ہے وہی  واپس لینا بھی جانتا ہے۔ سرکار عوام کے دلوں پر حکومت کیلئے ہوتی ہے نہ کہ ان کے دلوں کو زخم زدہ کرنے کیلئے۔ مرکزی حکومت اگر سچ میں سب کا ساتھ سب کا وکاس اور سب کا وشواس چاہتی ہے تو جملوں سے اوپر اٹھ کر کام کرے۔

You May Also Like

Notify me when new comments are added.