رمضان: شخصیت میں نکھار لانے کا مہینہ

مبارک مہینہ کا سایہ ہمارے سروں سے جاچکا ہے۔ یہ مبارک مہینہ روزہ اور عبادات کے ساتھ ساتھ دو دیگر اہم چیزوں کی دعوت دیتاہے جو اسلام کی اہم تعلیمات مانی جاتی ہیں اور وہ شخصیت میں نکھاراور رحمدلی نیز مہربانی سے متعلق عادات واطوار میں تبدیلیاں ہیں۔ یہ دو چیزیں ایسی ہیں جن کا اجراللہ تعالیٰ کے یہاں مقرر ہے جوانسان کو دنیا اور آخرت دونوں میں ملنے والا ہے۔مہربانی اور رحمدلی کا مطلب ہے کہ روزہ کے آغاز سے ہی روزہ دار کے منہ پر دوسرے تمام لوگوں کیلئے مسکراہٹ ہونی چاہئے۔ روزہ داروں کو چاہئے کہ وہ اپنے والدین، بہن بھائی، رشتہ داروں، دوستوں اور پڑوسیوں کے ساتھ حسن سلوک سے پیش آئیں اورساتھ ہی حسن سلوک میں مزید توسیع بھی ہونی چاہئے۔ تمام انسانیت کے ساتھ جوایک دوسرے کے تئیں باہمدیگر ذمہ داریاں ہیں وہ پوری کی جائیں اور اس میں مذہب اور برادری کے نام پر کچھ نہیں ہونا چاہئے۔ یعنی تمام انسانیت کے ساتھ مہربانی اور رحمدلی کی جانی چاہئے۔

گیسٹ کالم

رمضان: شخصیت میں نکھار لانے کا مہینہ

مکرمی!

مبارک مہینہ کا سایہ ہمارے سروں سے جاچکا ہے۔ یہ مبارک مہینہ روزہ اور عبادات کے ساتھ ساتھ دو دیگر اہم چیزوں کی دعوت دیتاہے جو اسلام کی اہم تعلیمات مانی جاتی ہیں اور وہ شخصیت میں نکھاراور رحمدلی نیز مہربانی سے متعلق عادات واطوار میں تبدیلیاں ہیں۔ یہ دو چیزیں ایسی ہیں جن کا اجراللہ تعالیٰ کے یہاں مقرر ہے جوانسان کو دنیا اور آخرت دونوں میں ملنے والا ہے۔مہربانی اور رحمدلی کا مطلب ہے کہ روزہ کے آغاز سے ہی روزہ دار کے منہ پر دوسرے تمام لوگوں کیلئے مسکراہٹ ہونی چاہئے۔ روزہ داروں کو چاہئے کہ وہ اپنے والدین، بہن بھائی، رشتہ داروں، دوستوں اور پڑوسیوں کے ساتھ حسن سلوک  سے پیش آئیں اورساتھ ہی حسن سلوک میں مزید توسیع بھی ہونی چاہئے۔ تمام انسانیت کے ساتھ جوایک دوسرے کے تئیں باہمدیگر ذمہ داریاں ہیں وہ پوری کی جائیں اور اس میں مذہب اور برادری کے نام پر کچھ نہیں ہونا چاہئے۔ یعنی تمام انسانیت کے ساتھ مہربانی اور رحمدلی  کی جانی چاہئے۔

 معمولی زندگی میں ہم اپنے پڑوس یا فطرت کے بارے میں زیادہ پرواہ کئے بغیر اور اپنے آپ کو ان سے جوڑے بغیر روزمرہ کے کام کرتے رہتے ہیں مگر ماہ رمضان میں ہماری زندگی کا یہ خلا اور خامیاں بھرنی چاہئیں۔ہمیں اپنے آس پاس کا خیال رکھنا چائے، علاوہ ازیں ہمیں دوسرے لوگوں کی ضرویات کا بھی خیال رکھنا چاہئے تاکہ ہم ان کی ضرورتیں پوری کریں اور اس طرح سماجی زندگی میں لوگوں کی دوریاں ختم ہوں۔انسانی مروت او رہمدرد ی کی اصل روح پاکیزگی، رحمدلی اور بھائی چارہ ہے جو اس ماہ مبارک میں بڑھ جانا چاہئے۔ہمیں اس مہینے میں بلالحاظ دین ومذہب ایک دوسرے کا خیال، ایک دوسرے کو قریب لانے، ایک دوسرے کا احترام کرنے کی ضرورت ہوتی ہے تاکہ ہمارا معاشرہ مشترکہ تہذیب کا نمونہ بن سکے۔ ماہ رمضانمیں نہ صرف روح کا پا کیزہ ہونا اسلام کا اہم پیغام ہے بلکہ ہمیں یہ مہینہ یہ تعلیم بھی دیتا ہے کہ خود تشدد جیسے شیطانی کام نہ کریں اور مذہب کے نام پر تشدد پھیلانے والوں کو معاف بھی کردیں تاکہ اس حسن سلوک سے وہ آئندہ کی زندگی میں اسلام کے نام پر تشدد سے باز آجائیں۔

 

عبداللہ

گلی قاسم جان، بلی ماران، دہلی

 

وضاحت نامہ:یہ مضمون نگار کی اپنی ذاتی رائے ہے۔ مضمون کو من و عن شائع کیا گیا ہے۔ اس میں کسی طرح کا کوئی ردوبدل نہیں کیا گیاہے۔ اس سیوطن سماچار کا کوئی لینا دینا نہیں ہے۔ اس کی سچائی یا کسی بھی طرح کی کسی جانکاری کیلئے وطن سماچار کسی طرح کا جواب دہ نہیں ہے اور نہ ہی وطن سماچاراس کی کسی طرح کی تصدیق کرتا ہے۔ 


You May Also Like

Notify me when new comments are added.