Hindi Urdu

مذہب

فکر وخیالات

مدیر کی قلم سے

Poll

Should the visiting hours be shifted from the existing 10:00 am - 11:00 am to 3:00 pm - 4:00 pm on all working days?

SUBSCRIBE LATEST NEWS VIA EMAIL

Enter your email address to subscribe and receive notifications of latest News by email.

نیوز کلیپنگ: شفیق الحسن کے بعد کیا اسلامک سینٹر عظیم اللہ صدیقی کا بھی اکرام کرے گا؟

ممکن ہے کہ ان کے موبائل میں ان لوگوں کا نمبر محفوظ نہ ہو جو لوگ خبریں بنانے کے لئے جانتے ہیں ہیں یا جن کی مارکیٹ پر گرفت ہے یا ہو سکتا ہے کہ ان کے ایسے لوگوں سے روابط ہوں لیکن انہوں نے ان کی اس مہم پر کوئی خاص توجہ نہ دی ہو۔ وطن سماچار کی یہ کوشش ہے کہ وہ ایسے لوگوں کو بھی سامنے لائے جن کی مہم پر عموماً لوگ توجہ نہیں دیتے یا نظر انداز کردیتے ہیں۔ اس سلسلے میں وطن سماچار جمعیہ علماء ہند سے جڑے ایک شخص کی مہم کو اپنے قارئین تک پہونچانے کی کوشش کررہا ہے جو اس کام میں ایک لمبے عرصہ سے سرگرم ہیں۔ جو ہر روز دو محاذ پر کام کرتے ہیں پہلا کام ان کا جمعیۃ علماء ہند سے جڑی خبروں کو یکجا کرنا ہوتا ہے اور دوسرا کام ان خبروں کو یکجا کرنا ہوتا ہے جو قومی یا بین الاقوامی اہمیت کی حامل ہوتی ہیں

محمد احمد

نئی دہلی: کچھ روز قبل انڈیا اسلامک کلچر ل سینٹر میں اسکائی ایڈورٹائزنگ کمپنی کے سرپرست شفیق الحسن کیلئے ایک معیاری محفل کا انعقاد کیاگیا۔چونکہ وہ تقریباً گذشتہ دو سال سے لوگوں کو اخبارات کی کلیپنگ ارسال کرکے ان کو باخبر کرنے کی کوشش کرتے ہیں اس لے کچھ اخبارات نے اس پر نوٹس لیا اور اپنے یہاں خبر شائع کرنی شروع کی۔ دیکھتے ہی دیکھتے اس چیزنے طول پکڑا اور ان کے اعزاز میں انڈیا اسلامک کلچرل سینٹر میں ایک نشست کا انعقاد کیا گیا جس میں ملک کے کئی معروف اور الگ الگ شعبوں کے ماہرین نے شرکت کی۔ پروگرام کی نظامت سراج الدین قریشی کے میڈیا ایڈوائزر ایم ودود ساجد نے کی۔ اس موقع پر لوگوں نے شفیق الحسن کی کاوشوں کو سراہا اور ان کے اس عمل کی ستائش کی۔وطن سماچار بھی شفیق الحسن کی کاوشوں کو سلام کرتا ہے اور انڈیا اسلامک کلچرل سینٹر اور میڈیا سمیت ان تمام لوگوں کو مبارکباد دیتا ہے جنہوں نے شفیق الحسن کی کاوشوں کو سراہا۔ ساتھ ہی لوگوں کو یہ یاد دلانا چاہتا ہے کہ اس مہم میں شفیق الحسن اکیلے نہیں ہیں بلکہ ان کے ساتھ کچھ اور لوگ بھی یہ کام کررہے ہیں، جن کا اکرام ہونا چاہئے۔

 

 ممکن ہے کہ ان کے موبائل میں ان لوگوں کا نمبر محفوظ نہ ہو جو لوگ خبریں بنانے کے لئے جانتے ہیں ہیں یا جن کی مارکیٹ پر گرفت ہے یا ہو سکتا ہے کہ ان کے ایسے لوگوں سے روابط ہوں لیکن انہوں نے ان کی اس مہم پر کوئی خاص توجہ نہ دی ہو۔ وطن سماچار کی یہ کوشش ہے کہ وہ ایسے لوگوں کو بھی سامنے لائے جن کی مہم پر عموماً لوگ توجہ نہیں دیتے یا نظر انداز کردیتے ہیں۔ اس سلسلے میں وطن سماچار جمعیہ علماء ہند سے جڑے ایک شخص کی مہم کو اپنے قارئین تک پہونچانے کی کوشش کررہا ہے جو اس کام میں ایک لمبے عرصہ سے سرگرم ہیں۔ جو ہر روز دو محاذ پر کام کرتے ہیں پہلا کام ان کا جمعیۃ علماء ہند سے جڑی خبروں کو یکجا کرنا ہوتا ہے اور دوسرا کام ان خبروں کو یکجا کرنا ہوتا ہے جو قومی یا بین الاقوامی اہمیت کی حامل ہوتی ہیں۔ ان کا نام ہے مولانا عظیم اللہ صدیقی قاسمی، جن کی اردو اور ہندی کے ساتھ انگریزی زبان پر بھی ہے مضبوط گرفت ہے۔ شاید وہ اس معاملے میں میڈیا سے بات کرنے کیلئے تیار نہ ہوں، لیکن گذشتہ ایک لمبے عرصے سے وطن سماچار کے ایڈیٹر کی موبائل پر ان کی کلیپنگ ہر روز بلاناغہ آتی ہے، اس لئے ہم نے سوچا کہ ان کے نام کو بھی لوگوں تک پہونچایا جائے اور ان کی کوششوں کی ستائش بھی کی جائے تاکہ ان کو حوصلہ ملے اور وہ مزید انہماک کے ساتھ اپنے کام کو انجام دیں، اس امید کے ساتھ کہ ایک دن ان پر بھی اسلامک سینٹر کا نظر کرم ہو تو عین ممکن ہے کہ ان کا بھی اکرام ہو۔

You May Also Like

Notify me when new comments are added.