Hindi Urdu

مذہب

فکر وخیالات

مدیر کی قلم سے

Poll

Should the visiting hours be shifted from the existing 10:00 am - 11:00 am to 3:00 pm - 4:00 pm on all working days?

SUBSCRIBE LATEST NEWS VIA EMAIL

Enter your email address to subscribe and receive notifications of latest News by email.

جامعہ کے محققین نے زندہ خلیوں میں آرسنک کی سطح کی نگرانی کے لئے نینو سینسر تیار کیا

جامعہ ملیہ اسلامیہ کے شعبہ بایو سینس میں اسسٹنٹ پروفیسر ڈاکٹر محمد محسن کی سربراہی میں ایک تحقیقی ٹیم نے زندہ خلیوں میں ہیوی میٹل آرسنک میں زہر کی مقدار کے تعین کے لئے ایک نینو سینسر تیار کیا ہے۔ آرسنک پوائزننگ کی شناخت کا مسئلہ سائسن کی دنیا میں کافی پیچیدہ رہا ہے اور اسی وجہ سے یہ کافی نقصانات کا سبب بھی بنتی رہی ہے۔

وطن سماچار ڈیسک

جامعہ کے محققین نے زندہ خلیوں میں آرسنک کی سطح کی نگرانی کے لئے نینو سینسر تیار کیا 

جامعہ ملیہ اسلامیہ کے شعبہ بایو سینس میں اسسٹنٹ پروفیسر ڈاکٹر محمد محسن کی سربراہی میں ایک تحقیقی ٹیم نے زندہ خلیوں میں ہیوی میٹل آرسنک میں زہر کی مقدار کے تعین کے لئے ایک نینو سینسر تیار کیا ہے۔ آرسنک پوائزننگ کی شناخت کا مسئلہ سائسن کی دنیا میں کافی پیچیدہ رہا ہے اور اسی وجہ سے یہ کافی نقصانات کا سبب بھی بنتی رہی ہے۔

سینسر فار آرسنک لنکڈ بلیک فوٹ ڈیسیز کے نام سے تیار شدہ نینو سینسر کا استعمال ان کی تباہی  یا نقصان کے بغیر زندہ خلیوں میں آرسنک کی سطح کا پتہ لگانے اور اس کی مقدار کو ناپنے کے لئے کیا جاسکتا ہے۔ اس کا استعمال نینومولر رینج تک آرسینک کی سطح کا پتہ لگانے کے لئے بھی کیا جاسکتا ہے۔

 اس کی مکمل تفصیلات معروف جریدہ”سائنٹفک رپورٹس“ میں شائع ہوئی ہیں۔

سینسر کی  سب سے بڑی خصوصیت یہ ہے کہ یہ جینیاتی طور پر انکوڈڈ ہے اور جو ریئل ٹائم پر آرسنک (As3 +) کے بہاؤ کی شرح میں تیزی سے تبدیلیوں کی نگرانی اور پیمائش کے لئے فلوروسینس سینسنگ ٹیکنالوجی استعمال کرتا ہے اور فوری طور پر ان کو زندہ خلیوں سے سگنل کے طور پر اطلاع دیتا ہے۔ 

اس نینو سینسر کی سب سے اچھی بات یہ ہے کہ یہ آرسنک کی زہر کی سطح کو کسی بھی قسم کے خلیوں اور کسی بھی وقت دیئے گئے پیمانے میں ماپ سکتا ہے۔

نانوسنسر کو پیٹنٹ کرنے کے لئے حکومت ہند کو درخواست دے دی گئی ہے۔

ڈاکٹر محسن بطور پرنسپل انوسٹی گیٹرحکومت ہند کے متعددتحقیقی منصوبوں پر کام کر رہے ہیں۔ نامور بین الاقوامی جرائد جیسے”بایوسینسرز اور بائیو الیکٹرانکس“ میں سینسرز اور ”بی ایم سی نانو بائیوٹیکنالوجی“کے شعبہ سمیت دنیا بھر کے وقیع جرائد میں ان کے تحقیقی مقالات شائع ہو چکے ہیں۔  فی الحال وہ صحت کی نگہداشت اور سیلولر ماحولیاتی نگرانی کے لئے نینو سینسر تیار کرنے میں منہمک ہیں۔

ڈاکٹر محسن ہندوستان میں پہلے محقق ہیں جنہوں نے  ایف آر ای ٹی پر مبنی نینوسنسر کی ترقی کے لئے تحقیق کو  اپنا موضوع بنایا ہے۔

انھیں 2014 اور 2016 میں اعلی امپیکٹ پبلشنگ ایوارڈ ملا ہے۔

ڈاکٹر محسن مختلف معتبر بین الاقوامی جرائد کے مبصر اور مدیر ہیں۔ وہ جامعہ میں 8 ریسرچ فیلوز کے ایک گروپ کی رہنمائی کررہے ہیں جس میں پی ایچ ڈی اور پوسٹ ڈکٹورل سائنسدان شامل ہیں۔

 

 

You May Also Like

Notify me when new comments are added.