امپار نے 11 نکاتی عید گائیڈ لائن جاری کی

لوگوں کو غریبوں، مسکینوں اور ان پھنسے لوگوں تک پہنچنے کا مشورہ جنہیں کھانا، دوائی یا کسی اور مدد کی ضرورت ہے، عید میں فضول خرچی سے بچنے کی اپیل

وطن سماچار ڈیسک

امپار نے 11 نکاتی عید گائیڈ لائن جاری کی

لوگوں کو غریبوں، مسکینوں اور ان پھنسے لوگوں تک پہنچنے کا مشورہ جنہیں کھانا، دوائی یا کسی اور مدد کی ضرورت ہے، عید میں فضول خرچی سے بچنے کی اپیل

ٓامپار لوگوں سے اپیل کرتا ہے کہ وہ گھر پر رہیں اور خریداری نہ کریں

عید کی نماز گھر پر ادا کریں

نفرتی میڈیا کو مسلمانوں کو بدنام کرنے کا موقع نہ فراہم کریں

زکاۃ ان کے اصلی حقداروں تک پہونچائیں

کم خرچ کرکے لوگ مثال قائم کریں

 

نئی دہلی:کوویڈ 19 کے خطرے کو محسوس کرتے ہوئے انڈین مسلمس فار پروگریس اینڈ ریفارمس نے عید 2020 کیلئے ملک کی مسلم کمیونٹی کو کچھ اہم تجاویز اور مشورے دئے ہیں اور ان سے اپیل کی ہے کہ وہ ان پر عمل کریں اور ایک اچھے شہری ہونے کا ثبوت دیں۔ ساتھ ہی میڈیا کے اس دھڑے کو مذہب کو بدنام کرنے کا موقع فراہم نہ کریں جو مسلمانوں اور اسلام کو بدنام کرنے میں مصروف عمل رہتا ہے۔ اس موقع پر میڈیا کو جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ عیدالفطر کو اب دس دن سے بھی کم وقت باقی بچے ہیں، ایسے میں مسلمانوں کو مشورہ دیا جارہا ہے کہ وہ عید کی نماز گھر پر پڑھیں، خریداری نہ کریں، عید کے پکوان کو کم سے کم کریں اور ذات و نسل، مذہب و برادری میں تمیز کے بغیر پریشان حال افراداور بیمارلوگوں کی عطیات کے ذریعہ مدد کریں۔

امپارکے کنوینر اور سنٹرل کمیٹی کے ممبر ڈاکٹر ایم جے خان نے مسلم کمیونٹی کے ممبروں کو مشورہ دیا ہے کہ وہ غریبوں، مسکینوں اور پھنسے ہوئے لوگوں تک پہنچیں جنہیں کھانا، دوا یا کسی اور امداد کی ضرورت ہے۔ انہوں نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ زکوٰ ۃ خرچ کرنے کی پہلی ترجیح ان لوگوں کیلئے ہونی چاہئے جو پریشان حال اور ضرورتمند ہیں۔ اپنے بیان میں، انہوں نے زکوٰ ۃ کو اسلام کا لازمی جزء قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ معاشرے کے امیر وں پر یہ فرض ہے، جو لوگ عام طور پر رمضان کے مہینے میں زیادہ ثواب کی نیت سے لوگ ادا کرتے ہیں او ر یہ مال کے نصاب تک پہونچنے کے بعد 2.5٪  ادا کی جاتی ہے۔

 

بیان میں کہا گیا ہے کہ ان ہدایات میں عید کے آس پاس کی معاشرتی زندگی کے تقریبا سبھیشعبوں کا احاطہ کیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ، عید پر کچھ بچوں کے اسکول کی فیس ادا کرنے، کسی کا کرایہ ادا کرنے، کنبہ کو کھانا کھلانے، کسی کو دوبارہ کاروبار شروع کرنے میں مدد جیسے کاموں کیلئے زکوٰۃ کے فنڈز کی فراہمی میں آسانی پیدا کرنے کی غرض سے ان لوگوں کیلئے ایک آن لائن نظام بھی متعارف کرایا گیا ہے جو کوویڈ 19 کی صورت میں عطیہ دہندگان تک نہیں پہنچ پاتے ہیں۔

 

رہنما اصولوں کے بارے میں بات کرتے ہوئے، امپار سینٹرل کمیٹی کے ممبر اور نامور صنعتکار سعید شیروانی نے کہا کہ ہمیں اس عید پر کم خرچ کرنے اور بحران کی اس صورتحال میں ضرورت مندوں کی مدد کرنے کی مثال قائم کرنی چاہئے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ یہی زکوٰۃکا بنیادی منتر اور مقصد ہے کہ اس کا پیسہ اس شخص کے پاس پہونچ جائے جو اس کا اصلی حقدار ہے۔بیان میں کہا گیا ہے کہ اب تک لوگوں کو انگریزی، اردو، ہندی، بنگلہ، تمل اور ملیالم زبان میں گیارہ نکاتی ہدایات جاری کی گئی ہیں۔ یہ ہدایات امپار مسجد مدرسہ اصلاحاتی گروپ اور دیگر مشہور اسلامی اسکالروں، زکاۃ فاؤنڈیشن آف انڈیا کے صدر ڈاکٹر ظفر محمود جیسے متعدد لوگوں کی مدد لی گئی ہے۔ اس سے قبل امپار نے رمضان المبارک کی 14 نکاتی ہدایات بھی جاری کی تھیں جن کی ملک بھر میں نہ صرف پذیرائی ہوئی بلکہ لوگوں نے اس پر عمل کرکے ایک اہم مثال قائم کی جس کیلئے امپار ان کا مشکورہ اور ممنون ہے۔

You May Also Like

Notify me when new comments are added.